شانگلہ الپوری ( رضاشاہ سے) ڈسٹرکٹ ہیڈ کواٹر ہسپتال میں مریضوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہڑ تال چوتھے روز بھی جاری رہا ال کو اڈینشن کونسل ضلعی شانگلہ اپنے مطالبات کے حق میں سراپا احتجاج ضلع ناظم سکرٹریٹ کے لان میں جلسہ اور دھرنا کو نسل کے جنرل سکرٹری محبوب علی نے خطاب کرتے ہوے کہا کہ ہم اپنے حقوق پر کسی قسم کی سودے بازی نہیں کرینگے غیر معیاری چار کول اور فایر ووڈ ہمیں کسی طور پر منظور نہیں ہم نے اپنی کشتیاں جلادی ہیں ڈپٹی کمیشنر شانگلہ کے عدم تعاون پر افسوس ہے خان باچاہ نے خطاب کرتے ہوے کہا امیر مقام نے ایک بچے کویہاں ضلع ناظم کے حیثت سے بھٹایا یہ کونسلر کا ووٹ نہیں جو اپ نے پیسوں سے خریداہ ہے ہمارے ووٹ تونہیں خرید سکتے ڈپٹی کمیشنر ٹھکیدار کے ساتھ ملا ہواہے اور ہمیں اپنے جایز حقوق سے محروم کر رہے ہیں ہم وہ کلاس فور ملازم نہیں ہیں ہم نے اپنی جاییدادیں دی ہیں اگر ہمارے مسلہ کو صیح طور پر حل نہیں کیا گیا تو احتجاج جاری رہے گاشوکت یوسفزی نے حق کا ساتھ نہیں دیا تو اس کا حمینازہ انہیں بگھتناپڑے گا ڈاکٹر ممتاز نے کہا کہ ہم ایک ہیں اور ایک ہی رہنگے ہمیں دبانے کی کوشش کی گی تو نتیا یج اچھے نہیں ہونگے ال کواڈینشن کونسل کے صدر محمد اسماعیل نے کہا کہ چارکول ہے کہ سر مہ جس کو پیسا ہ جاے کیوں مذاق کا نشانہ بنا یا جارہا ہے جبکہ ہسپتال میں مریضوں کو مکمل مشکلات کا سامنا ہے اس وقت ہسپتال ایک بھوت بنگللے کی شکل اختیار کرچکا ہے اور مریضوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے اس وقت چارکول کے مصلے نے پورے ضلع شانگلہ کو اپنے لپیٹ لیا ہے مقررین نے کہا کے وہ دن دور نہیں کے ضلع بھر کے سرکاری ملازمین اپنے حقوق کیلے ایک پلیٹ فارم پر کھڑے ہونگے لیکن ابھی بھی ہمیں مذاکرات اور طفل تسلوں اوٹھ پر بیلایا جارہا ہے مگر ہم ایسا نہیں ہونے دینگے اور اپنے حقوق کازرہ زرہ حاصل کرتے رہینگے خواہ ہمیں بہت بڑی قربانی کیوں نہ دینا پڑے انھوں نے اس بات پر بھی سخت افسو س کا اظہار کیا کے اس وقت ضلع شانگلہ میں کھولے عام کرپشن ہو رہا ہے لیکن نیب والوں نے مکمل خاموشی اختیار کر رکھی ہے جو لمحہ فکریہ