اسلام آباد: سپریم کورٹ میں گوجرانوالہ میں گرلزسکول پرتجاوزات سے متعلق کیس میں جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے ہیں کہ ٹرسٹ زمین کوریگولرکرنا قانون کیخلاف ہے،غیرقانونی کام کرنے والے افسران کیخلاف کارروائی ہوئی؟،جسٹس گلزار احمد نے کہاکہ چیف سیکرٹری پنجاب کل تک مسئلہ حل کریں،مسئلہ حل نہیں کرسکتے توعہدے پرکیوں ہیں؟چیف سیکرٹری مسئلہ حل کریں ورنہ نتائج بھگتیں۔ تفصیلات کے مطابق جسٹس گلزار کی سربراہی میں 3 رکنی بنچ نے گوجرانوالہ میں گرلزسکول پرتجاوزات سے متعلق کیس کی سماعت کی،وکیل پنجاب حکومت نے عدالت کو بتایا کہ محکمہ تعلیم کومتبادل زمین دینے کیلئے تیارہیں۔ جسٹس گلزار احمد نے ریمارکس دیئے کہ حکومت ہمیں لالی پاپ کیوں دے رہی ہے،گرلزسکول ٹرسٹ کی زمین اورشہرکے وسط میں تھا،ٹرسٹ پراپرٹی کی جگہ کچی آبادی کیسے بن گئی؟۔ جسٹس گلزار احمد نے کہاکہ ٹرسٹ زمین کوریگولرکرنا قانون کیخلاف ہے،غیرقانونی کام کرنے والے افسران کیخلاف کارروائی ہوئی؟چیف سیکرٹری پنجاب کل تک مسئلہ حل کریں،مسئلہ حل نہیں کرسکتے توعہدے پرکیوں ہیں؟جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ چیف سیکرٹری مسئلہ حل کریں ورنہ نتائج بھگتیں۔ جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ سکول کیلئے زمین 13 کلومیٹردوردینے کاکیاجوازہے؟کچی آبادی کوکیوں نہیں منتقل کردیتے؟13 کلومیٹردوربچے کیسے جائیں گے؟۔ عدالت نے کیس کی سماعت کل تک ملتوی کردی۔